خیالِ یار کی رنگینیوں میں گُم ہو کر

خیالِ یار کی رنگینیوں میں گُم ہو کر

*خیالِ یار کی رنگینیوں میں گُم ہو کر*
*جمالِ یار کی عظمت نکھار دی ہم نے*
*اُسے  نہ  جیت  سکے گا  غمِ زمانہ  اب*
*جو  کائنات  تیرے در پہ ہار دی ہم نے*
               *ساغر صدیقی*

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *