مَیں کارآمد ھُوں یا بے کار ھُوں مَیں

مَیں کارآمد ھُوں یا بے کار ھُوں مَیں

مَیں کارآمد ھُوں یا بے کار ھُوں مَیں
مگر اے یار ! تیرا یار ھُوں مَیں
جو دیکھا ھے کسی کو مت بتانا
علاقے بھر میں عزّت دار ھُوں مَیں
خُود اپنی ذات کے سرمائے میں بھی
صفَر فیصد کا حصّے دار ھُوں مَیں
اور اب کیوں بَین کرتے آگئے ھو ؟
کہا تھا نا بہت بیمار ھُوں مَیں ؟
مری تو ساری دُنیا بس تُمہی ھو
غلط کیا ھے جو دُنیا دار ھُوں میں ؟
کہانی میں جو ھوتا ھی نہیں ھے
کہانی کا وھی کردار ھُوں مَیں !
یہ طَے کرتا ھے دستک دینے والا
کہاں در ھُوں، کہاں دیوار ھُوں مَیں
کوئی سمجھائے میرے دُشمنوں کو
ذرا سی دوستی کی مار ھُوں مَیں
مجھے پتّھر سمجھ کر پیش مت آ
ذرا سا رحم کر، جاں دار ھُوں مَیں
بس اتنا سوچ کر کیجےکوئی حُکم
بڑا مُنہ زور خدمت گار ھُوں مَیں
کوئی شک ھے تو بے شک آزمالے
ترا ھونے کا دعوے دار ھُوں مَیں
اگر ھر حال میں خوش رھنا فن ھے
تو پھر سب سے بڑا فنکار ھُوں مَیں !
زمانہ تو مُجھے کہتا ھے فارس
مگر فارس کا پردہ دار ھُوں مَیں
اُنہیں کِھلنا سکھاتا ھُوں مَیں فارس
گلابوں کا سہولت کار ھُوں مَیں !

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *