مَیں کارآمد ھُوں یا بے کار ھُوں مَیں

مَیں کارآمد ھُوں یا بے کار ھُوں مَیں

مَیں کارآمد ھُوں یا بے کار ھُوں مَیں
مگر اے یار ! تیرا یار ھُوں مَیں
جو دیکھا ھے کسی کو مت بتانا
علاقے بھر میں عزّت دار ھُوں مَیں
خُود اپنی ذات کے سرمائے میں بھی
صفَر فیصد کا حصّے دار ھُوں مَیں
اور اب کیوں بَین کرتے آگئے ھو ؟
کہا تھا نا بہت بیمار ھُوں مَیں ؟
مری تو ساری دُنیا بس تُمہی ھو
غلط کیا ھے جو دُنیا دار ھُوں میں ؟
کہانی میں جو ھوتا ھی نہیں ھے
کہانی کا وھی کردار ھُوں مَیں !
یہ طَے کرتا ھے دستک دینے والا
کہاں در ھُوں، کہاں دیوار ھُوں مَیں
کوئی سمجھائے میرے دُشمنوں کو
ذرا سی دوستی کی مار ھُوں مَیں
مجھے پتّھر سمجھ کر پیش مت آ
ذرا سا رحم کر، جاں دار ھُوں مَیں
بس اتنا سوچ کر کیجےکوئی حُکم
بڑا مُنہ زور خدمت گار ھُوں مَیں
کوئی شک ھے تو بے شک آزمالے
ترا ھونے کا دعوے دار ھُوں مَیں
اگر ھر حال میں خوش رھنا فن ھے
تو پھر سب سے بڑا فنکار ھُوں مَیں !
زمانہ تو مُجھے کہتا ھے فارس
مگر فارس کا پردہ دار ھُوں مَیں
اُنہیں کِھلنا سکھاتا ھُوں مَیں فارس
گلابوں کا سہولت کار ھُوں مَیں !

خیالِ یار کی رنگینیوں میں گُم ہو کر

خیالِ یار کی رنگینیوں میں گُم ہو کر

*خیالِ یار کی رنگینیوں میں گُم ہو کر*
*جمالِ یار کی عظمت نکھار دی ہم نے*
*اُسے  نہ  جیت  سکے گا  غمِ زمانہ  اب*
*جو  کائنات  تیرے در پہ ہار دی ہم نے*
               *ساغر صدیقی*

سنو ہمدم۔۔!تمہارے واسطے کچھ لفظ لکھنے ہیں

سنو ہمدم۔۔!  تمہارے واسطے کچھ لفظ لکھنے ہیں۔۔

واسطے کچھ لفظ لکھنے ہیں۔۔
تمہارے نام کچھ اشعار کرنے ہیں۔۔
وہ لمحے معتبر تو ہیں،
تمہارے ساتھ جو بیتے۔۔
جو کچھ پل میں نے تھامے ہیں۔۔
سنو ساتھی۔۔!
وہ پل سارے۔۔
لفظوں کے رنگ میں رنگ کر،
ابھی تم کو سنانے ہیں۔۔
کسی تصویر میں رنگ کر،
ابھی تم کو دکھانے ہیں۔۔
سنو ہمدم۔۔!
کہو تو پاس میں رکھ لوں۔۔
اثاثہ اُن گلابوں کا۔۔
تمہاری میٹھی باتوں کا۔۔
اور اُن میٹھی باتوں سے،
مجھے کچھ لفظ چننے ہیں۔۔
پھر تم سے بس یہ کہنا ہے۔۔!
سنو ساتھی ، سنو ہمدم۔۔
اگر جو تم اجازت دو۔۔
تمہیں اپنے پاس میں رکھ لوں….

کُجھ شوق سِی یار فقیری دا

❤۔
کُجھ شوق سِی یار فقیری دا
کُجھ عشق نے دَر دَر رول دِتا
کُجھ سجنا کَسر نہ چُھوڑی سِی
کُجھ زہر رَقیباں گھول دِتا
کُجھ ہجر فِراق داَ رنگ چٹرہیا
کُجھ دردِ ماہی انمول دِتا
کُجھ سڑ گئی قسمت میری
کُجھ پیار وِچ یاراں رُول دِتا
کُجھ اونج وِی رہواں اوکھیاں سَن
کُجھ گل وِچ غم داَ طوق وِی سِی
کُجھ شہر دے لوگ وِی ظالم سنَ
کُجھ سانوں مَرن دا شوق وِی سی